عقل و دل عقل نے ایک دن یہ دل سے کہا

Spread the love

عقل و دل

عقل نے ایک دن یہ دل سے کہا
بھولے بھٹکے کی رہنما ہوں میں

ہوں زمیں پر ، گزر فلک پہ مرا
دیکھ تو کس قدر رسا ہوں میں

کام دنیا میں رہبری ہے مرا
مثل خضر خجستہ پا ہوں میں

ہوں مفسر کتاب ہستی کی
مظہر شان کبریا ہوں میں

بوند اک خون کی ہے تو لیکن
غیرت لعل بے بہا ہوں میں

دل نے سن کر کہا یہ سب سچ ہے
پر مجھے بھی تو دیکھ ، کیا ہوں میں

راز ہستی کو تو سمجھتی ہے
اور آنکھوں سے دیکھتا ہوں میں

ہے تجھے واسطہ مظاہر سے
اور باطن سے آشنا ہوں میں

علم تجھ سے تو معرفت مجھ سے
تو خدا جو ، خدا نما ہوں میں

علم کی انتہا ہے بے تابی
اس مرض کی مگر دوا ہوں میں

شمع تو محفل صداقت کی
حسن کی بزم کا دیا ہوں میں

تو زمان و مکاں سے رشتہ بپا
طائر سدرہ آشنا ہوں میں

کس بلندی پہ ہے مقام مرا
عرش رب جلیل کا ہوں میں!

عقل و دل عقل نے ایک دن یہ دل سے

https://shayari-urdu-hindi.com/%d8%a7%db%8c%da%a9-%d9%86%d9%88%d8%ac%d9%88%d8%a7%d9%86-%d9%86%db%81%d8%a7%db%8c%d8%aa-%d8%a8%d8%af%da%a9%d8%a7%d8%b1-%d8%aa%da%be%d8%a7%d8%a7%d9%88%d8%b1-%d8%ac%d8%a8-%da%a9%d9%88%d8%a6%db%8c-%da%af/

Wisdom and heart
 
The intellect said this one day from the heart
I am the leader of the forgotten
 
I am on the ground, in the sky
See how juicy I am
 
Work is leadership in the world
I like Khidr Khujasta
 
I am the commentator of the book entity

 
But a drop of blood
I am priceless
 
The heart heard and said that all this is true
But look at me too, what am I?
 
She understands the secret entity
And I see with my own eyes
 
You have to deal with phenomena
And I’m familiar with the inside
 
Knowledge from you, knowledge from me
So God, I am like God
 
The limit of knowledge is impatience
I am the cure for this disease
 
The candle is the party of truth
I have given you a kiss of beauty
 
So establish a relationship with time and place
I am familiar with Tayyar Sidra
 
At what height is the place dead?
I belong to the glorious throne of the Lord!

Leave a Reply

Your email address will not be published.