Best Ghazal Bahadur Shah Zafar urdu English ghazals

Spread the love

تضمین بر غزل بہادر شاہ ظفر

تضمین بر غزل بہادر شاہ ظفر
 
گھستے گھستے پاؤں کی زنجیر آدھی رہ گئی
مر گئے پر قبر کی تعمیر آدھی رہ گئی
سب ہی پڑھتا کاش، کیوں تکبیر آدھی رہ گئی
“کھنچ کے، قاتل! جب تری شمشیر آدھی رہ گئی
غم سے جانِ عاشقِ دل گیر آدھی رہ گئی”
 
بیٹھ رہتا لے کے چشمِ پُر نم اس کے روبروُ
کیوں کہا تو نے کہ کہہ دل کا غم اس کے روبرو
بات کرنے میں نکلتا ہے دم اس کے روبرو
“کہہ سکے ساری حقیقت کب ہم اس کے روبرو
ہم نشیں! آدھی ہوئی تقریر، آدھی رہ گئی”
 
تو نے دیکھا! مجھ پہ کیسی بن گئی، اے رازدار!
خواب و بیداری پہ کب ہے آدمی کو اختیار
مثلِ زخم آنکھوں کو سی دیتا، جو ہوتا ہوشیار
“کھینچتا تھا رات کو میں خواب میں تصویرِ یار
جاگ اٹھا جو، کھینچنی تصویر آدھی رہ گئی”
 
غم نے جب گھیرا، تو چاہا ہم نے یوں، اے دل نواز!
مستیِ چشمِ سیہ سے چل کے ہوویں چارہ ساز
توُ صدائے پا سے جاگا تھا، جو محوِ خوابِ ناز
“دیکھتے ہی اے ستم گر! تیری چشمِ نیم باز
کی تھی پوری ہم نے جو تدبیر، آدھی رہ گئی”
 
اس بتِ مغرور کو کیا ہو کسی پر التفات
جس کے حسنِ روز افزوں کی یہ اک ادنیٰ ہے بات
ماہِ نو نکلے پہ گزری ہوں گی راتیں پان سات
“اس رُخِ روشن کے آگے ماہِ یک ہفتہ کی رات
تابشِ خورشیدِ پُر تنویر آدھی رہ گئی”
 
تا مجھے پہنچائے کاہش، بختِ بد ہے گھات میں
ہاں فراوانی! اگر کچھ ہے، تو ہے آفات میں
جُز غمِ داغ و الم، گھاٹا ہے ہر اک بات میں
“کم نصیبی اس کو کہتے ہیں کہ میرے ہات میں
آتے ہی خاصیّتِ اکسیر آدھی رہ گئی”
 
سب سے یہ گوشہ کنارے ہے، گلے لگ جا مرے
آدمی کو کیا پکارے ہے، گلے لگ جا مرے
سر سے گر چادر اتارے ہے، گلے لگ جا مرے
“مانگ کیا بیٹھا سنوارے ہے، گلے لگ جا مرے
وصل کی شب، اے بتِ بے پیر آدھی رہ گئی”
 
میں یہ کیا جانوں کہ وہ کس واسطے ہوں پھِر گئے
پھر نصیب اپنا، انھیں جاتے سنا، جوں پھر گئے
دیکھنا قسمت وہ آئے، اور پھر یوں پھِر گئے
“آ کے آدھی دور، میرے گھر سے وہ کیوں پھِر گئے
کیا کشش میں دل کی ان تاثیر آدھی رہ گئی”
 
ناگہاں یاد آ گئی ہے مجھ کو، یا رب! کب کی بات
کچھ نہیں کہتا کسی سے، سن رہا ہوں سب کی بات
کس لیے تجھ سے چھپاؤں، ہاں! وہ پرسوں شب کی بات
“نامہ بر جلدی میں تیری وہ جو تھی مطلب کی بات
خط میں آدھی ہو سکی، تحریر آدھی رہ گئی”
 
ہو تجلّی برق کی صورت میں، ہے یہ بھی غضب
پانچ چھ گھنٹے تو ہوتی فرصتِ عیش و طرب
شام سے آتے تو کیا اچھی گزرتی رات سب
“پاس میرے وہ جو آئے بھی، تو بعد از نصف شب
نکلی آدھی حسرت، اے تقدیر! آدھی رہ گئی”
 
تم جو فرماتے ہو، دیکھ اے غالبؔ آشفتہ سر
ہم نہ تجھ کو منع کرتے تھے، گیا کیوں اُس کے گھر؟
جان کی پاؤں اماں، باتیں یہ سب سچ ہیں مگر
“دل نے کی ساری خرابی، لے گیا مجھ کو ظفر
واں کے جانے میں مری توقیر آدھی رہ گئی”

https://shayari-urdu-hindi.com/urdu-aqwal-e-zareen-best-aqwal-in-urdu-hindi/

Guarantee on Ghazal Bahadur Shah Zafar

  The slippery foot chain was cut in half
  He died but the construction of the tomb was halved
  I wish everyone reads, why Takbir is half left
  “Pull, killer! When the sword is half left
  The heart of the lover was cut in half by grief. “

  Let him sit in front of it with moist eyes
  Why did you say that the grief of the heart is in front of him?
  The tail comes out in front of him to talk
  “When will we be able to say the whole truth in front of him?”
  We are drunk! Half speech, half left “

  You saw! How did it happen to me, O secret one?
  When does a person have control over dreams and wakefulness?
  Like a wound to the eyes, which would be careful
  “I used to take pictures at night in my dreams, man
  I woke up and the picture was half over. “

  When grief surrounded us, we wished so, O heartfelt!
  The fun of walking with black eyes
  You were awakened by the sound of a dream
  “As soon as you see, O oppressor! Your half-opened eyes
  The whole thing we did was half done. “

  What does this proud idol have to do with anyone?
  This is one of the most beautiful things in the world
  Nine months have passed and five nights have passed
  One Saturday night in front of this bright side
  The radiance of the sun is half gone. “

  If you want to deliver me, bad luck is lying in wait
  Yes abundance! If anything, it’s disaster
  Part of grief and sorrow is loss in everything
  “It’s called luck in my hands
  As soon as they arrived, most of the properties were cut in half. “

  This corner is the edge of all, embrace and die
  What do you call a man, hug and die
  He has taken off the sheet that fell from his head, embraced it and died
  “What is the demand of the seated, embrace and die?”
  The night of the connection, O idolized idol, is half over. “

  I don’t know why they went back
  Then my destiny, I heard them go, as they went
  Luckily they came, and then they went back
  “Halfway through, why did they leave my house?
  Is the effect of the heart halved in attraction? “

  Suddenly I remember, O Lord! When
  I don’t say anything to anyone, I’m listening to everyone
  Why hide from you, yes! That was the night before
  “In a hurry, what you meant was.”
  The letter was cut in half, the writing was cut in half. “

  In the case of lightning, there is also anger
  Five or six hours would be an opportunity for luxury
  If you come from Syria, what a good night everyone
  “Whatever comes to me, after midnight
  Out of half regret, O destiny! Half left. “

  See what you say, O mighty troubled head
  We didn’t forbid you, why did you go to his house?
  John’s feet mother, all these things are true but
  “All the heartache, Zafar took me
  Murree Tauqeer halved in death

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *